آج کی سب سے بڑی خبر : دعائیں رنگ لے آئیں ، حکومت نے صوبہ پنجاب میں ڈیم بنانے کا اعلان کر دیا




لاہور (ویب ڈیسک )وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے کہا ہے کہ محرم الحرام کے دوران سکیورٹی انتظامات میں معاونت کیلئے فوج اور رینجرز کو طلب کیا گیا ہے ۔مجالس اور جلوسوں کی نگرانی خفیہ کیمروں سے ہوگی۔ اشتعال انگیز تقاریر کرنے والوں کے خلاف سخت کارروائی ہوگی۔قابل اعتراض مواد کی اشاعت و تقسیم پر

کوئی سمجھوتہ نہیں ہوگا۔جنوبی پنجاب میں رودکوہی اور سیلاب سے بچاؤ کے لئے منی ڈیم بنائے جائیں گے ۔عوام کو آسانیاں ملیں اور یہی ہمارا ایجنڈا ہے ۔سیف سٹی پراجیکٹ ہر ڈویژن میں شروع کریں گے ۔وہ محرم الحرام کے دوران سکیورٹی انتظامات کی مانیٹرنگ کیلئے سول سیکرٹریٹ میں قائم مرکزی کنٹرول روم اور قربان لائنز میں پنجاب سیف سٹی اتھارٹی کے ہیڈ آفس کے دورہ کے موقع پر گفتگو کر رہے تھے ۔وزیراعلیٰ نے کنٹرول روم اور پنجاب سیف سٹی اتھارٹی کے مختلف حصے دیکھے ۔ وزیراعلیٰ نے اس موقع پر کہاکہ محرم الحرام کے دوران پرامن فضا کے قیام کو ہر قیمت پر یقینی بنایا جائے اور گزشتہ برسوں سے بڑھ کر سکیورٹی انتظامات کئے جائیں ۔بعد ازاں ان سے پنجاب کے نئے انسپکٹر جنرل پولیس نے ملاقات کی ۔وزیر اعلی ٰ نے امید ظاہر کی کہ آئی جی پولیس نئے پاکستان میں نئی پولیس کو پروان چڑھائیں گے ۔مزید برآں نیشنل ڈیزاسٹر رسک مینجمنٹ فنڈ کے چیف ایگزیکٹو آفیسر لیفٹیننٹ جنرل(ر) ندیم احمد سے گفتگو کرتے ہوئے وزیر اعلی ٰ نے کہاہے کہ جنوبی پنجاب میں رودکوہی اور سیلاب سے بچاؤ کے لئے منی ڈیم بنائے جائیں گے ۔ مزید برآں وزیراعلیٰ سے یو ایس ایڈ کے وفد نے ملاقات کی،

جس میں تعلیم، صحت، زراعت، توانائی اور روزگار کے مواقع بڑھانے کے شعبوں میں تعاون پر تبادلہ خیال کیا گیا۔بعد ازاں وزیر اعلیٰ کی زیر صدارت صوبے کی ترقیاتی سکیموں کا جائزہ لینے کیلئے خصوصی اجلاس ہوا۔وزیراعلیٰ نے صوبہ بھر میں اراضی سینٹر زمیں عوام کو درپیش مسائل کے فی الفور دور کرنے اور لینڈ ریکارڈ مینجمنٹ انفارمیشن سسٹم کا دائرہ کار تحصیل سے بڑھا کر قانونگوئی تک کرنے کی ہدایت کی ہے – انہو ں نے کہا عوام کو آسانیاں ملیں اور یہی ہمارا ایجنڈا ہے ۔بعدازاں صوبے اور ڈیرہ غازی خان کی ترقیاتی سکیموں کا جائزہ لینے کیلئے خصوصی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعلیٰ نے کہا کہ عوام کی خدمت اور مسائل کے حل کے لئے انتظامیہ کو پوری طرح متحرک ہونا ہوگا۔اب کاغذی کارروائی نہیں چلے گی۔چھوٹے شہروں اور قصبات میں لیڈیز اور چلڈرن پارک ہونا ضروری ہیں۔دریں اثنا ء وزیراعلیٰ نے کوہاٹ میں کوئلے کی کان میں گیس دھماکے سے قیمتی انسانی جانوں کے ضیاع پر دکھ اور افسوس کا اظہار کیا ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں